Arifa Siddiqui Ke Mutaliq Afsoosnaak Khabar Agaye

4257


انا للہ وانا الیہ راجعون : نامور پاکستانی اداکارہ عارفہ صدیقی کے حوالے اسے افسوسناک خبر آ  گئی


’’کچھ دن تو بسو میری آنکھوں میں، غنچہ شوق، رات پھیلی ہے تیرے، کبھی کہا نہ کسی سے، دل ہی دل میں، دل دھڑکنے کا سبب یاد آیا‘‘ جیسی شہرہ آفاق غزلوں کے خالق موسیقار اور ماضی کی معروف اداکارہ عارفہ صدیقی کے شوہر، استاد نذر حسین85 برس کی عمرمیں وفات پاگئے۔

مرحوم گزشتہ ایک ماہ سے مقامی ہسپتال میں پھیپھڑوں کے سرطان میں مبتلا ہونے کے باعث زیرعلاج تھے۔ جہاں وہ گزشتہ روز اپنے خالق حقیقی سے جاملے۔ مرحوم کو لاہورکے مقامی قبرستان میں سپردخاک کیا گیا۔ اس موقع پرفنون لطیفہ کے مختلف شعبوں سے تعلق رکھنے والوں کے علاوہ عزیزواقارب بھی موجود تھے۔ واضح رہے کہ استاد نذر حسین حیدر آباد میں پیدا ہوئے اور انہوں نے اپنے فنی سفر کا آغاز حیدر آباد ریڈیو سے کیا۔ نامور شعراء کرام کے کلام کو انہوں نے بڑی مہارت کے ساتھ سچے سروں میں سجایا اورپھرشہنشاہ غزل مہدی حسن، ملکہ ترنم نورجہاں، غلام علی، فریدہ خانم، بلقیس خانم اورکئی بھارتی غزل گائیکوںنے ان کی کمپوزیشن میں بنی غزلوں کوریکارڈ کیا۔ خاص طورپرملکہ ترنم نورجہاں نے استاد نذرحسین کے ساتھ بہت کام کیا اوران کے فنی سفرمیں بہت سی مقبول غزلیں انہی کی کمپوزیشن میں ریکارڈ ہوئیں۔ اس کے علاوہ استاد نذرحسین نے ریڈیو پاکستان اورپاکستان ٹیلی ویژن کے ساتھ بھی بہت سے پروگرام ریکارڈ کروائے۔ ان کی وفات کو جہاں موسیقی کے سنجیدہ حلقوں نے ناقابل تلافی نقصان قراردیا، وہیں انہیں شاندار الفاظ میں خراج عقیدت پیش کرتے ہوئے کہا کہ معروف شعراء کرام کے اشعارکو جس خوبصورتی کے ساتھ استاد نذرحسین نے سچے سروں کی مالامیں سجایا، اس کی کوئی دوسری مثال نہیں ملتی۔ ہم اگرپاکستانی میوزک کے سنہرے دورکا تذکرہ کریں تووہ نذرحسین کی دھنوں کے بناکبھی مکمل نہیں ہوسکتا۔ انہوں نے ان گنت مشکل غزلوں کوبڑی سمجھداری کے ساتھ آسان کیا اورپھران کی دھنوںکو ایسا تیارکیا کہ بڑے توبڑے ، بچے بھی ان کی دھنوں کو گنگناتے دکھائی دیتے۔ یہی وجہ ہے کہ ہمارے پڑوسی ملک میں بھی ان کی صلاحیتوں سے استفادہ کرنے والے بہت سے تھے، لیکن انہوں نے ہمیشہ پاکستان کوترجیح دی اوریہاں پررہتے ہوئے بہت سا کام انجام دیا، جواب ان کی یاد کوہمیشہ زندہ رکھے گے۔ وہ اس دنیا سے رخصت ہوچکے ہیں لیکن ان کا فن ان کے نام کوہمیشہ زندہ رکھے گا۔

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here